متفرق کہانیاں

رؤف پاریکھ

سنتے ہیں کہ اچھے پڑوسی اللہ کی نعمت ہیں لیکن یہ بات شاید ہمارے پڑوسیوں نے نہیں سنی۔ ہم نہیں کہتے کہ ہمارے پڑوسی اچھے نہیں ہیں۔ صرف آپ کے سامنے ایک نقشہ سا کھینچتے ہیں، جس سے آپ کو اندازہ ہوگا کہ ہمارے پڑوسی کیسے ہیں۔

٭….٭

سب سے پہلے مرزا صاحب کو لیجیے۔ یہ حضرت ریڈیو بجانے کے بہت شوقین ہیں، بلکہ یوں لگتا ہے کہ مارکونی صاحب کو ریڈیو ایجاد کرنے کا خیال مرزا صاحب کے ذوق و شوق کو دیکھ کر ہی آیا تھا۔ اللہ جھوٹ نہ بلوائے تو چوبیس گھنٹوں میں سے کوئی بائیس گھنٹے ان کا ریڈیو بجتا ہے بلکہ چیختا ہے اور پورے زور و شور سے چیختا ہے۔ ان کو غالباً ریڈیو کی آواز کم کرنے کا طریقہ نہیں معلوم، اسی لیے تمام محلے والوں نے اپنے اپنے ریڈیو بیچ کر روئی کے بنڈل خرید لیے ہیں اور روئی نکال نکال کر کانوں میں ٹھونستے رہتے ہیں۔ ان کے ریڈیو پر دنیا بھر کے ریڈیو اسٹیشنوں سے نشر ہونے والے پروگرام پورا محلہ (روئی ٹھونسنے کے باوجود) آسانی سے سن لیتا ہے۔ البتہ قریب کھڑے ہوئے آدمی کی آواز نہیں سنائی دیتی۔

قریشی صاحب بھی کچھ اسی قسم کا شوق رکھتے ہیں۔ انھیں موسیقی سے بہت لگاﺅ ہے لیکن فرصت انھیں آدھی رات کے بعد ہی نصیب ہوتی ہے، اسی لیے یہ ٹھیک اسی وقت ستار، ہارمونیم اور طبلہ بجانا شروع کرتے ہیں جب مرزا صاحب کا ریڈیو بند ہوتا ہے۔ اس طرح ہمارے محلے میں چوبیس گھنٹے بجلی، پانی اور گیس کی سہولت کے ساتھ موسیقی بھی چوبیس گھنٹے دستیاب ہے۔

محلے میں آدھی رات کو رونق میں مزید اضافہ اس وقت ہوجاتا ہے۔ جب جمالی صاحب کے دوستوں کی محفل جمتی ہے۔ اس محفل میں خوب قہقہے لگائے جاتے ہیں اور وہ اُدھم مچتا ہے کہ توبہ ہی بھلی، کبھی کبھی ان کے دوستوں میں سے کوئی صاحب تانیں بھی اُڑاتے ہیں۔ اس سارے ہنگامہ ہاﺅ سے یہ فائدہ ہوتا ہے کہ محلے میں رات بھر کوئی چور پاس پھٹک تک نہیں سکتا۔

اس سارے شور شرابے پر جلالی صاحب البتہ بہت خفا ہوتے ہیں۔ جلالی صاحب کئی سال یورپ میں رہ چکے ہیں اور کہتے ہیں کہ یورپ کے کسی شہر میں یہ شور و غل ہو تو فوراً پولیس آجائے اور ان بدتمیزوں کو پکڑ کر لے جائے۔ ان کا کہنا ہے کہ یورپ میں لوگ رات دس بجے کے بعد سیڑھیاں بھی دبے قدموں چڑھتے اُترتے ہیں تاکہ گھروں میں سوئے ہوئے لوگوں کی نیند خراب نہ ہو لیکن اس کا کیا علاج کہ ابھی جلالی صاحب کی موٹر سائیکل میں سائلنسر یعنی شور کم کرنے والا آلہ نہیں ہے۔ نتیجہ یہ ہے کہ حضرت جب موٹر سائیکل پر سوار ہو کر آتے جاتے ہیں تو پھٹ پھٹ کا ایک ایسا کان پھاڑ دینے والا شور سنائی دیتا ہے کہ قبر میں پڑے مردے بھی سن لیں تو ہڑبڑا کر اُٹھ بیٹھیں یا کم از کم کروٹ تو ضرور لیں۔ ہمارا جی چاہتا ہے کہ ان سے پوچھیں کہ اگر ایسی موٹر سائیکل یورپ کے کسی شہر میں چلائی جائے تو کیا ہو….؟ کیا وہاں پولیس ایسے بدتمیزوں کو انعام دیتی ہے….؟

نازک صاحب بھی مزے کے آدمی ہیں۔ اِنھیں جانور پالنے کا شوق ہے۔ ان کے گھر کے باہر ایک بکرا دو بھینسیں اور ایک ہرن بندھا رہتا ہے۔ گھر کے صحن میں مور اور بطخیں ہیں اور گھر میں کسی جگہ توتے، چڑیاں، بلبلیں اور نہ جانے کون کون سے پرندے پال رکھے ہیں۔ غرض گھر کیا ہے، اچھا خاصا چڑیا گھر ہے۔ نازک صاحب ان تمام حیوانات کی غلاظت اور اپنے گھر کا کوڑا بڑی پابندی سے روزانہ گھر سے باہر سڑک پر پھینکتے ہیں اور پھر شکایت کرتے ہیں کہ شہر میں گندگی بڑھتی جارہی ہے، لوگ صفائی کا خیال نہیں کرتے، وغیرہ وغیرہ۔

ہمارے ایک اور پڑوسی طفیلی صاحب کی عادت ہے کہ وہ اکثر چیزیں اُدھار مانگتے ہیں۔ مثلاً اِستری، اخبار، جھاڑو، برتن، کتابیں، تھوڑی سی چاے کی پتی، ذرا سا آٹا، صرف ایک انڈا، معمولی سا نمک، چٹکی بھر کالی مرچیں وغیرہ اور بے چارے اکثر واپس کرنا بھول جاتے ہیں۔ ایک دفعہ وہ ہماری بجلی کی اِستری کئی دن تک استعمال کرتے رہے اور ہم بڑی مشکل سے مانگ کر واپس لائے تو اگلے دن آموجود ہوئے کہا: ”ہماری‘استری واپس کیجیے۔“

خاصی مغز ماری کے بعد اُنھیں یاد آیا کہ وہ استری ان کی نہیں اصل میں ہماری تھی، کافی عرصے سے ان کے گھر میں رہنے کی وجہ سے انھیں اپنی لگنے لگی تھی۔

ہمارے پڑوسیوں کی فہرست خاصی لمبی ہے اور ان سب کی دلچسپ عادتیں بیان کی جائیں تو دفتر کے دفتر بھر جائیں لیکن ہم یہ سوچ کر اس مضمون کو ختم کیے دیتے ہیں کہ آخر ہم بھی تو کسی کے پڑوسی ہیں اور ہوسکتا ہے کہ ان کو بھی ہم سے کچھ شکایتیں ہوں۔ اگرچہ ہم پوری کوشش کرتے ہیں کہ کسی پڑوسی کو ہماری وجہ سے کوئی تکلیف نہ ہو، کیوں کہ حضور اکرم صلی اللہ علیہ وسلم کا فرمان ہے کہ ”جس شخص کی شراتوں سے اس کے پڑوسی محفوظ نہ ہوں وہ مومن نہیں۔“

ساتھی کے ساتھیو! اُمید ہے کہ آپ وہ سب نہیں کرتے ہوں گے جو ہمارے پڑوسی کرتے ہیں۔

٭….٭

اس تحریر کے مشکل الفاظ

ستار: مضراب سے بجایا جانے والا ایک ساز جس میں تین تار ہوتے تھے اب پانچ یا سات ہوتے ہیں

ہارمونیم: ایک صندوق نما بڑا دھونکے والا ساز جس کے پردوں کو ہاتھوں سے دبا کر بجایا جاتا ہے

طبلہ: ساز کے ساتھ بجانے والا مشہور باجا جو گملے کی شکل یا پیالہ نما ہوتا ہے

تان اڑانا: ہنسی مذق میں فقرے بازی کرنا، گانا

مئی 3, 2021

ہمارے پڑوسی

سنتے ہیں کہ اچھے پڑوسی اللہ کی نعمت ہیں لیکن یہ بات شاید ہمارے پڑوسیوں نے نہیں سنی۔ ہم نہیں کہتے کہ ہمارے پڑوسی اچھے نہیں ہیں۔ صرف آپ کے […]
مارچ 24, 2021

رَنگاکی بدمعاشی

’رَنگا بھالو‘ اپنی سستی کی وجہ سے جنگل بھر میں نالائق اور نکما مشہور تھا۔ جس طرح انسانوں میں کوئی شخص سست ہوجائے اور کوئی کام نہ کرے بس اوروں […]
مارچ 22, 2021

آسیب زدہ مکان

شکر ہے، مکان کی چھت تو نصیب ہوئی۔ اس شہر میں کرائے کا مکان تلاش کرنا بھی ایک آزمائش ہے۔“ اسلم میاں نے ایک کرسی پر بیٹھتے ہوئے گہرا سانس […]
مارچ 19, 2021

جنت کا خواب

کیا تم سچ کہہ رہے ہو؟“ زبیر نے حیرت سے پوچھا۔ ”مجھے بھلا جھوٹ بولنے کی کیا ضرورت؟“ مزمل نے کندھے اُچکاتے ہوئے کہا۔ ”اچھا….“ زبیر نے کچھ سوچتے ہوئے […]
فروری 16, 2021

شکارن

صاحبزادے شاہ میر دونوں ہاتھوں میں تھیلے اُٹھائے گھر میں داخل ہوئے۔ تھیلوں میں سبزی، انڈے ڈبل روٹی اور گوشت تھا۔ انھوں نے جیسے ہی جالی کا دروازہ کھولا تو […]
فروری 12, 2021

قصہ اندھیری رات کا

تیز آواز کے ساتھ ہی ہمارا مال بردار بحری جہاز کراچی کی بندر گاہ سے دور ہوتا چلا گیا۔ میں نے آخری نظر بندر گاہ پر ڈالتے ہوئے دل میں […]
فروری 2, 2021

پریٹوریا کا پھول

….نوید بھاشانی بکنے والا اور پرنس سبطین پیچھے ہٹنے والا نہیں تھا…. نوید بھاشانی کے چہرے پر بے چینی کے تا ثرات رفتہ رفتہ گہرے ہوتے جارہے تھے۔ اس کی […]
جنوری 21, 2021
Rimsha Javed aek inch ki kali

ایک انچ کی کلی

ایک انچ کی کلی رمشا جاوید غرور کا سر تو ہمیشہ سے نیچا تھا ایک بار پھر غرور خاک میں مل گیا   بیگم وقاص کو گلاب کی ننھی کلی […]
جنوری 21, 2021

ایک انچ کی کلی

غرور کا سر تو ہمیشہ سے نیچا تھا ایک بار پھر غرور خاک میں مل گیا   بیگم وقاص کو گلاب کی ننھی کلی پر جھکا دیکھ کر آم بھیا […]
نومبر 21, 2020

نئی جیکٹ

  ایلن کو اپنی سائیکل اور جیکٹ کو کھونے سے زیادہ کسی اور بات کی فکر تھی ایلن اپنی نئی جیکٹ پا کر بے حد خوش تھا کیوں کہ اس […]
اکتوبر 17, 2020
کنڈر گارٹن Kindergarten گل رعنا

کنڈر گارٹن

پڑھیے! کنڈر گارٹن کی ایک دلچسپ کہانی…. کہیں آپ بھی کنڈر گارٹن تو نہیں….؟ جب ہم اس نئے مکان میں شفٹ ہوئے تو یہ میرے اسکول میں داخلے کا وقت […]
ستمبر 17, 2020

ننھا بھیدی

انو میاں کی عادت نے ان کے سب دوست چھین لیے تھے   اَنّو کے ابو کا سر غصے سے پھٹنے کو تھا۔ ان کی سمجھ نہیں آ رہا تھا […]
ستمبر 17, 2020

تایا جان

پڑھیے ٹائم مشین کا منصوبہ ، جس میں ماضی سے کسی بھی شخص کو بُلایا جاسکتا تھا، کیا وہ تجربہ کامیاب رہا ’’سو… ننانوے… اٹھانوے… چھیانوے…‘‘ اُلٹی گنتی شروع ہوچکی […]
جون 29, 2020

مٹھائی کا ڈبہ حصہ اول

بینا صدیقی محمود کی شادی کی مٹھائی سائرہ بیگم نے کس کس کو بھجوائی…. پڑھیے اس دلچسپ تحریر میں تانیہ اسکول سے لوٹی تو گھر کے دالان میں مٹھائی کا […]
جون 29, 2020

ذرا سی غلطی

ایمن احسن پہلی بار مجھے ثناءآپی بہت اچھی لگیں کیوں کہ انھوں نے ہمیں بھی دعوت دی ”جی…. ہاں ٹھیک ہے۔ میں آجاتی ہوں۔ جی ثناءکو لے کر آﺅں گی […]
//]]>