ڈرامے

محمد الیاس نواز

کردار

استاد:سرفراست 

طالب علم: ناظر، شمس، عثمان، خاور، زوار اور جمال

پس منظر

ناظر ایک معروف تعلیمی ادارے میں زیرِ تعلیم ہے۔ وہ کچھ دن کی رخصت پراندرون ملک ایک قصبے میں گیا ہوا تھا۔ آج وہ دوبارہ اپنے ادارے میں حاضر ہوا توفلسفے کے پیریڈمیں کیا گفتگو ہوئی۔ ملاحظہ فرمائیے۔

منظر

کمرہ جماعت کا منظر ہے۔ خاصی تعداد طالب علموں کی موجود ہے۔ سرفراست حاضری لینے کے بعد ایک نظر طالب علموں پر ڈالتے ہیں۔ناظر پر جا کر ان کی نظر ٹھہر جاتی ہے۔ وہ نا ظر سے مخاطب ہوتے ہیں۔

سرفراست: ”ناظر!“

ناظر: (اُٹھتے ہوئے)”جی جناب!“

سرفراست: (ہاتھ کا اشارہ کرتے ہوئے) ”بیٹھے رہو، بیٹھے رہو….کیسے ہو اور کب آئے ہو؟“

ناظر: ”شکریہ جناب!….میں ٹھیک ہوں اور کل ہی آیاہوں۔“

سرفراست: ”تو تمھارا دریا دیکھنے کا شوق پورا ہوگیا…. دیکھ لیا دریا؟…. کیا دیکھااورکیسا لگا؟“

ناظر: ”جی …. دریا دیکھنا توبہت اچھا لگا….مگر ایک عجیب بات دیکھی۔“

سرفراست:(تعجب سے)”اچھا….وہ کیا؟“

ناظر: ”جناب!….جس وقت میں دریا پر پہنچا…. دریا کا صاف پانی اپنی معمول کی رفتار کے ساتھ بہہ رہا تھا….پھرآہستہ آہستہ ہوا میں تیزی آنا شروع ہوئی جو دیکھتے ہی دیکھتے آندھی کی شکل اختیار کر گئی….دریا کے پانی میں ایک بھونچال سا آگیا اور اس کے پانی کی تہوںمیں چھپا گند اورکچرا نکل نکل کرپانی کی سطح پر آنے لگا…. تھوڑی دیر پہلے جودریا صاف لگ رہا تھا،آندھی آنے کے بعد اس کے اندر کی غلاظتیں اس کے چہرے پر آگئیں…. جناب! میں حیران رہ گیا….ایسا لگ رہاتھا جیسے دریا بیمار ہوگیا ہو۔“

سرفراست: (طالب علموں کے درمیان ٹہلتے ہوئے) ”ہوںںں….انسان کی زندگی کا دریا بھی ایسا ہی ہے….جب تک سکون سے بہتا رہتا ہے۔ تب تک کسی کو اندازہ نہیں ہوتا کہ وہ اپنے اندر کتنی گندگیاں اور غلاظتیں چھپائے بہہ رہا ہے اورجب زندگی کے اس دریا میں طوفان برپا ہو جاتا ہے تو ساری گندگی نکل کر اس کی سطح پر آجاتی ہے اور اس کا چہرہ خراب کر دیتی ہے ….اُس وقت اندازہ ہوتا ہے کہ یہ اپنے اندر کیا کچھ لیے ہوئے بہہ رہا تھا۔ پھر افسوس ہوتا ہے کہ ہم اندر سے اخلاقی طور پر کتنے بیمار ہو چکے ہیں۔“

عثمان: ”جناب!….یہ کون سا وقت ہوتا ہے اور ایسے وقت میں انسان کو کیا کرنا چاہیے؟“

سرفراست: ”یہ وہ وقت ہوتا ہے جب ایک عام آدمی کے ذہن میں یہ احساس پیدا ہو تا ہے کہ وہ یہ معلوم کرے کہ اس کی زندگی میں یہ گندگیاں کہاں سے آرہی ہیں…. اگر ایسے وقت میں بھی انسان کو اس بات کا احساس نہ ہوتو سمجھو وہ بے ہوشی کی نیند سو چکا ہے اور اسے نفع و نقصان کا کوئی احساس نہیں ہے۔“

شمس: ”جناب! مہربانی فرما کر مثال دے کر ذرا بات کو مزید واضح کیجیے ….جیسا کہ آپ کیا کرتے ہیں۔“

سرفراست: ”مثال؟ ….ہاں…. ہمارے ادارے کے سامنے والے بازار کے دکان دار….جب تک ان کی زندگی کا دریا پر سکون تھا تو ساری غلاظتیں چھپی ہوئی تھیں…. جب ان دکان داروں میں کسی بات پر لڑائی ہوئی تو گویا طوفان آگیا اور ہر دکاندار اپنے اندر کی ساری گندگیوں کو باہر نکال لایا ….کیا کچھ نہیں کہا گیا ایک دوسرے کو اور کیا کچھ نہیں کیا گیا ایک دوسرے کے ساتھ….یہ دکان دار ہی کیا ہر جگہ ایسا ہی ہو رہا ہے….ان کی مثال تو میں نے اس لیے دی کہ یہ تازہ واقعہ ہے اور آپ سب نے اپنی آنکھوں سے دیکھا ہے….اس کو کہتے ہیں اخلاقی بیماری ،جو انسان کی روح کو لاحق ہوتی ہے….کچھ سمجھ میں آیا آپ لوگوں کی؟“

خاور: ”بالکل جناب!….اس کا مطلب ہے کہ زندگی کا دریا تو ہر جگہ طغیانی پر ہے ….کیونکہ یہ لڑائی تو ہر جگہ ہے ….اکیلا آدمی اکیلے آدمی سے لڑ رہا ہے اور قومیں قوموں سے لڑ رہی ہیں ….اور لڑائی کے اس طوفان نے قوموں کے اندر کی ساری گندگیاں نکال کر سب کے سامنے رکھ دی ہیں….جنھیں وہ صدیوں سے اپنے اندر چھپائے ہوئے تھیں….یعنی اخلاقی طور پر ساری قومیں اندر سے بیمار ہو چکی ہیں۔“

ناظر: ”بالکل جناب !….اب تو مرض یہاں تک بڑھ گیا ہے کہ بے انصافی ،بے رحمی،بے شرمی ،ظلم ستم،جھوٹ و فریب اور اسی طرح کی باقی برائیاں اب صرف ایک آدمی یا چند افراد تک محدود نہیں بلکہ پوری پوری قومیں مل کر ان جرائم کا ارتکاب کر رہی ہیں جناب !میں یہ کہناچاہ رہا ہوں کہ دنیا کی ساری بڑی بڑی قومیں وہ سارے جرائم کر رہی ہیں کہ اگر ان کے ملک کا کوئی اکیلا آدمی ان جرائم میں سے کوئی ایک جرم بھی کرے تو وہ اسے جیل میں ڈال دیں….اور یہ قومیں چھانٹ چھانٹ کر اپنے اندر سے بڑے مجرموں کو نہ صرف یہ کہ اپنا سربراہ بنا لیتی ہیں بلکہ بڑی بے حیائی اور ڈھٹائی کے ساتھ انھیں کی قیادت میں جرائم کا ارتکاب کرتی ہیں۔“

زوار:”جنابِ عالی….اب تو حال یہ ہے کہ ایک شخص دوسرے شخص کے حق پر نہیں بلکہ پوری قوم دوسری قوم کے حق پر ڈاکا ڈالتی ہے….ایک ملک دوسرے ملک کولوٹ لیتا ہے ….اور مزے کی بات یہ کہ اس گناہ کی شکایت دوسری قوم سے اسی وقت کر رہے ہوتے ہیںجس وقت خود وہی گناہ کر رہے ہوتے ہیں جن اصولوں کی پابندی کا مطالبہ دوسروں سے کرتے ہیں خود ان پر پابندی حرام سمجھتے ہیں ….بڑی بڑی قوموں کے نمائندے بڑے مہذب چہروں کے ساتھ جب دوسری قوم کے ساتھ معاہدہ کرتے ہیں تو سوچ رہے ہوتے ہیں کہ جیسے ہی موقع ملا اس معا ہدے کو بکرے کی طرح ذبح کر دیں گے۔“

سر فراست:”ہوںں….(جمال کے پاس رک کر مسکراتے ہوئے)….”آج تم خاموش ہو، کچھ تو کہو میاں!….“

جمال:”جناب !….میرا خیال ہے کہ پوری انسانیت کا جسم اس بیماری سے کسی پھوڑے کی طرح گل سڑ چکا ہے ….اور انسان کی وہ صلاحیت جو اچھائی کی راہ میں استعمال ہوتی تھی وہ اب برائی کے راستے میں استعمال ہوتی ہے….جیسے بہادری اور سخاوت آج کل ظلم اور زیادتی کے لیے مستعمل ہیں….مگر جنابِ عالی !….یہ بھی تو ہو سکتاہے ناں کہ معاشرے کے اکثر افراد نیک اور شریف ہوں مگر ان کا سربراہ یا نمائندہ کوئی ڈاکو ،چور ،لٹیرا،جھوٹا یا دغا باز بن گیا ہو اور پوری قوم کے فیصلے غلط کرتاہو ؟“

سرفراست: ”یہ کیسے ہو سکتا ہے کہ قوم کے اکثر افراد شریف ہوں اور پھر بھی اپنا سربراہ یا نما ئندہ وہ کسی دغا بازکو منتخب کریں ….قوم کے افراد میں خرابیاں پیدا ہوجاتی ہیں تو ہی قوم خراب ہوتی ہے ناں ….یہ کیسے ممکن ہے کہ قوم کے اکثر افراد نیک ہوں اور پھر بھی وہ قوم کسی دوسری قوم کے حق پر ڈاکا ڈالے یا قتل وغارت گری کرے….قوم افراد سے بنتی ہے مٹی یا گارے سے نہیں….انسان بیمار ہوتے ہیں تو ہی انسانیت بیمار ہوتی ہے۔“

ناظر: (فکر مندی کے ساتھ)”تو پھر انسان کو اخلاقی بیماری کے علاج کے لیے کیا کرنا چاہیے؟“

سر فراست: ”ہمیں سب سے پہلے یہ سراغ لگا نا چاہیے کہ یہ اخلاقی یعنی روحانی بیماری کہاں سے چلی آ رہی ہے جو ہمیں تباہی کے گڑھے کی طرف لے جاتی ہے…. اس کے بعد ہم دیکھتے ہیں کہ اس اخلاقی بیماری کے علاج کا طریقہ کیا ہے ….تو بچو! چونکہ اخلاقی بیماری روح کو لگتی ہے اس لیے اس کا علاج بھی روحانی طریقے سے ہوتا ہے ….اور دنیا میں دو طریقوں سے اس بیماری کا علاج کرنے کا رواج ہے۔

ایک طریقہ وہ ہے جو اللہ اور موت کے بعد کی زندگی پر یقین رکھنے والے طبیبوں کا طریقہ¿ علاج ہے اور ان کی دوا میں بھی یہی چیز شامل ہے….دوسری قسم کے طبیب وہ ہیں جو ان باتوں پر یقین نہیں رکھتے ….اسی لیے ان کی دوا بھی دوسری قسم ہی کی ہوتی ہے۔“

عثمان: ”جناب! بڑی دلچسپ بات ہے ….مہربانی فرما کر ان کے بارے میں ہمیں بتائیے۔“

سرفراست: ”یہ جو پہلی قسم کے طبیب ہیں نا ں بیٹا!یہ خود تین اقسام میں تقسیم ہیں۔

ان میں سے پہلی قسم وہ ہے جو شرک میں مبتلا ہے، اُنھوں نے اپنے ذہن میں خدا کے سوا دوسری ہستیوں کی خیالی تصا ویر بنا لی ہیںاور ان کو خدائی اختیارات دے دیے ہیں ….ان کی سوچ یہ ہے کہ ہم چاہے اللہ کی بندگی سے کتنے ہی غافل رہیں اور جتنے بھی جرائم کرتے رہیں ….مقدس ہستیاں ہمیں تھوڑے سے نذرانے کے بدلے میں قیامت کے دن خدا سے بخشوا دیں گی۔ اس خیال اور عقیدے نے ان کے ذہنوں سے خدا اور آخرت کے عقیدے کو کھوکھلا اور بے اثر کر دیا ہے….جب کسی چیز کا ڈر ہی نہ ہو تو کوئی بگڑا ہوا کیوںاپنی حرکتیں ٹھیک کرے گا ….لہٰذا ان کی دوا بے کار ہو گئی۔

دوسری قسم تھوڑی سی بہتر ہے ….یہ شرک تو نہیں کرتے مگر یہ سمجھتے ہیں کہ خدا صرف عبادات اور مذہبی رسومات کے بدلے میں ان کے سارے گناہوں کا بوجھ جنت کے دروازے پر رکھوا کر اُنھیں جنت میں بھیج دے گا۔ زندگی کے باقی معاملات جیسے بھی ہوں، ان کے بارے میں کوئی پوچھ گچھ نہیں ہو گی ….لہٰذا ان کی نا مکمل دوا سے پوری شفا کیسے ہوسکتی ہے۔

تیسری قسم وہ ہے جو ان دونوں سے بہتر ہے ….جو نہ شرک میں مبتلا ہے اورنہ ہی یہ سوچتی ہے کہ اللہ کی رحمت صرف عبادات و رسومات کے بدلے اُنھیں جنت میں داخل کر دے گی ….یہ لوگ نیک بھی ہیںمگر ان کا تصور علاج بڑا محدود ہے ….یہ سوچتے ہیں کہ بیمار انسانیت سے کنارہ کش ہو کر خود نیک بن جاﺅ تو سب ٹھیک ہو جائے گا ….بھلا بتاﺅ کہ جب آپ نے بیماروں سے ہی کنارہ کر لیا تو شفا کیسے ملے گی بلکہ اس طرح تو بیماری پھیلانے والی قوتوں کو کھلی چھٹی مل گئی ہے۔“

شمس: ”جناب! یہ تو پہلے والے طبیبوں کی تین اقسام تھیں ….اور دوسرے والے؟“

سرفراست: ”ہوں ںں…. اب آتے ہیں ان طبیبوں کی طرف جو خدا اور آخرت پر یقین رکھتے ہیں اور نہ ہی پہلے طریقے سے علاج کرتے ہیں۔ آج کل دنیا پر اُنھیں کا طریقہ¿ علاج چل رہا ہے ….ان کی بھی تین اقسام ہیں۔

پہلی قسم کہتی ہے کہ انسان کو خوشی حاصل کرنے کے لیے بھلائی کرنی چاہیے مگر آج تک وہ یہ نہیں بتا سکے کہ کس قسم کی خوشی حاصل کرنے کے لیے؟ اپنی خوشی؟ دوسروں کی خوشی؟ کسی ایک شخص کی خوشی یا کسی قوم کی خوشی؟ ایسے طریقہ¿ علاج کو ماننے والے دنیامیں مختلف ذمہ داریوں پر کام کر رہے ہیں….

مثلاً استاد،جج، وزیراور دوسرے بہت سے کام،مگران میں ہر کوئی صرف اپنی خوشی کے لیے کام کررہا ہے دوسروں کے لیے سانپ بنا ہوا ہے کیوں کہ اسے صرف اپنی خوشی عزیزہے ….اور کوئی اپنی قوم کی خوشی کے لیے کام کررہا ہے تو دوسری قوم کے لیے قاتل بناہوا ہے ….لہٰذا اس طرح کیسے علاج ہو سکتا ہے؟

اسی طرح دوسری قسم وہ ہے جو کہتی ہے کہ انسان کو کمال حاصل کرنے کے لیے بھلائی کرنی چاہیے ….مگر وہ بھی یہ نہیں سمجھا سکے کہ کس کا کمال اور کیسا کمال؟

تیسری قسم کہتی ہے کہ قانون کی اطاعت کرنا فرض ہے مگر وہ بھی آج تک یہ نہیں سمجھا سکے کہ وہ کون سے قانون کی بات کرتے ہیں کہ جس کو ماننا فرض ہے۔

تو ہم اس نتیجے پر پہنچے کہ انسانیت میں اخلاقی بیماری کا پھیلاﺅیہ بتا رہا ہے کہ یہ لوگ بھی علاج میں ناکام ہوئے ہیں۔“

ناظر: ”جناب!….تو پھر آخر علاج کیا ہے انسانیت کی اس اخلاقی بیماری کا ؟“

سرفراست: ”بیٹا اصل سوال یہ نہیں کہ وہ کون سی بھلائی ہے جس سے انسان کی اخلاقی بیمار ی کا علاج کیا جائے بلکہ اصل سوال یہ ہے کہ انسان ہے کیا؟….اور اس کی حیثیت کیا ہے ….کیوںکہ جب تک انسان کو اپنی حیثیت کا علم نہیں ہو گا تو اسے کیسے معلوم ہوگا کہ اس کے لیے کون سا کام کا کام بھلائی ہے ۔

میں آپ کو ایک مثال دے کر سمجھا تا ہوں ….ایک مکان میں مکان کا مالک اور چوکیدار رہتے ہیں۔ چوکیدار نے مالک سے پوچھے بغیر گھر میں سے کوئی چیز اٹھا کر کسی غریب کو دے دی یا مالک کے پیسے اٹھا کر صدقہ کر دیے تو کیا یہ بھلائی ہوگی؟“

ناظر: ”نہیں جناب۔“

سرفراست: (حیران کن انداز میں) ”آخر کیوں؟ حالانکہ اس نے رقم صدقہ کی ہے ،کسی چور کو تونہیں دی ….پھر یہ کیوں بھلائی نہیں ہے؟“

عثمان: ”جناب اس لیے کہ اس گھر میں اس کی حیثیت ایک چوکیدار کی ہے ….نہ وہ گھر کا مالک ہے اور نہ گھر میں رکھی کسی چیز کا۔“

سرفراست: ”اس دنیا میں انسان کی حیثیت بھی مالک کی نہیں ہے بلکہ وہ مالک کا بندہ اور خلیفہ ہے ….دنیا میں اس کے پاس جو کچھ بھی ہے وہ خداکا دیا ہوا ہے…. یہاں تک کہ اس کے پاس اس کی اپنی جان بھی اپنی نہیں ہے بلکہ خدا کی امانت ہے…. اس لیے اصل مالک کی مرضی کے بغیر وہ کچھ نہیں کر سکتا ….بھلائی وہی ہے جس کا مالک نے حکم دیا اس پر عمل کرے یا جس سے روکااس سے رک جائے ….اور یہی اصل علاج ہے انسان کی اخلاقی بیماری کا ….اسی میں خوشی بھی ہے ،کمال بھی اور فرض کو ادا کرنے کا قانون بھی یہی ہے ۔“

گھنٹہ بجتا ہے ….سرفراست کمرہ جماعت سے نکلتے ہیں۔

(پردہ گرتا ہے )

جنوری 24, 2019

علاج

کردار استاد:سرفراست  طالب علم: ناظر، شمس، عثمان، خاور، زوار اور جمال پس منظر ناظر ایک معروف تعلیمی ادارے میں زیرِ تعلیم ہے۔ وہ کچھ دن کی رخصت پراندرون ملک ایک […]
اگست 21, 2017
Murgha bina Ticket kay by KP Saksena, Monthle sathee Magazine, ڈراما "مرغا بنا ٹکٹ کے" کے پی سکسینہ ماہنامہ ساتھی

مرغا بنا ٹکٹ کے

پردہ کھلتا ہے اسٹیج پر ریلوے کے گیٹ کا منظر۔ گیٹ پر ٹکٹ کلکٹر وردی میں ملبوس کھڑا ہے۔ پوپٹ لال نام کا ایک شخص اپنے خاندان کے افراد کے […]
اگست 12, 2017

عوام کا مقدمہ

تمہارے الفاط کھوکھلے ہیں، بے رنگ ہیں۔ ان میں جان دالو، ان میں رنگ بھرو پس منظر: ہم مےں اور سنی مےں یہ بحث چل پڑی کہ حکومت زےادہ طاقتور […]
دسمبر 30, 2016

گھڑی

گھڑی محمد الیاس نواز کردار: جمال: ایک طالب علم بچہ کمال صاحب:جمال کے والد پس منظر: پچھلے جمعے محلے کی مسجد کے امام صاحب نے ’نماز‘کے موضوع پر خطبہ دیا۔جمال […]
دسمبر 30, 2016

بینگن کا بھرتہ

(عدالت کا منظر۔ کالا کوٹ پہنے جج صاحب بیٹھے ہیں۔ ایک طرف وکیل ہیں جن کے ہاتھ میں فولڈ کی ہوئی فائل ہے، جسے بار بار لہرا کر وہ اپنی […]
//]]>